لیاقت بلوچ

وزیر اعظم کا موقف سے سماجی اور انتظامی سطح پر کنفیوژن پیدا ہورہی ، لیاقت بلوچ

لاہور (عکس آن لائن) نائب امیر جماعت اسلامی مجلس قائمہ سیاسی امور کے صدر لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ عمران خان مسلسل الجھا ہوا اور تنہائی زدہ موقف پیش کر رہے ہیں جس سے سماجی اور انتظامی سطح پر کنفیوژن پیدا ہو رہی ہے ۔ انٹرویو میں انہوں نے کہا ہے کہ اسپیکر قومی اسمبلی نے بہت کوشش کے ساتھ پارلیمانی جماعتوں کے قائدین کا اجلاس قومی وحدت اور اتفاق رائے کے لیے بلایا لیکن وزیر اعظم عمران خان نے اسے سبوتاژ کر دیا عمران خان مسلسل الجھا ہوا اور تنہائی زدہ موقف پیش کر رہے ہیں جس سے سماجی اور انتظامی سطح پر کنفیوژن پیدا ہو رہی ہے ۔

مسئلہ کشمیر ، افغانستان صورتحال ، معاشی بحران ، بھارت میں مسلمانوں پر ہندو برہمن کے فاشزم اور اب کورونا وبا سے نمٹنے کے لیے عمران خان نے قوم کو یکجان کرنے اور قومی قیادت کے ذریعے اتفاق رائے کی حکمت عملی اختیار کرنے میں ناکام رہے ہیں ۔ ایسی قیادت کے ہاتھوں بحران بڑھیں گے ، ریاست اور سیاست میں بڑا ٹکراؤ پیدا ہو گا پھر منفی عمران خان کے علاوہ کوئی حل باقی نہیں بچے گا ۔

حکومت کو ضد انا اور ہٹ دھرمی چھوڑنا ہو گی ۔ لیاقت بلوچ نے لاہور میں کورونا وبا سے متاثر لاک ڈاؤن سے متاثرہ غریب خاندانوں کی مدد کے لیے جماعت اسلامی کے ریلیف مرکز کا وزٹ کیا اور رضا کاروں سے خطاب کیا ۔ احتیاطی تدابیر اختیار کرنا ، مستحق غریب روزانہ کی روزی کمانے والوں کی مدد کرنا اور رجوع الی اللہ توبہ و استغفار اور نجات کا راستہ ہے ۔ اس موقع پر ذاکر اللہ مجاہد ، احمد سلمان بلوچ ، عبد العزیز عابد نے بھی خطاب کیا اور آگاہ کیا کہ راشن پیکج ، پکا ہوا کھانا ، ماسک ، صابن ، سینیٹائزر تقسیم کیا جائے گا ۔

لیاقت بلوچ نے پنجاب یونیورسٹی کے سابق وائس چانسلر اور معروف ماہر معاشیات ڈاکٹر انیس احمد کے جنازہ کے بعد کہا کہ مرحوم نظریہ پاکستان ، خود انحصاری کی بنیاد پر معیشت اور پاکستان کو علامہ اقبال اور قائد اعظم کے نظریات کے مطابق نظام دینے کے بڑے داعی تھے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں