کلبھوشن یادیو

کلبھوشن یادیو کے لیے قانونی نمائندہ مقرر کرنے کی درخواست اسلام آباد ہائی کورٹ نے سماعت کے لیے مقرر کر دی

اسلام آباد(عکس آن لائن )کلبھوشن یادیو کی سزا کے حوالے سے عالمی عدالت انصاف کے فیصلے پر عمل درآمد پر حکومت کی کلبھوشن یادیو کے لیے قانونی نمائندہ مقرر کرنے کی درخواست اسلام آباد ہائی کورٹ نے سماعت کے لیے مقرر کر دی چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس اطہر من اللہ کی سربراہی میں بینچ تشکیل دے دیا گیا اسلام آباد ہائیکورٹ 3 اگست کو کلبھوشن یادیو قانونی نمائندہ کیس کی سماعت کرے گی

درخواست میں وفاق کو بذریعہ سیکرٹری دفاع اور جج ایڈووکیٹ جنرل برانچ جی ایچ کیو کو فریق بنایا گیا ہے درخواست گزار نے عدالت کو بتایا کہ کلبھوشن یادیو نے سزا کے خلاف درخواست دائر کرنے سے انکار کیا درخواست گزار نے یہ بھی موقف اپنایا کہ کلبھوشن یادیو بھارت کی معاونت کے بغیر پاکستان میں وکیل مقرر نہیں کر سکتا بھارت بھی آرڈی نینس کے تحت سہولت حاصل کرنے سے گریزاں ہے درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی کہ عدالت کلبھوشن یادیو کے لیے قانونی نمائندہ مقرر کرے

عدالت حکم دے تاکہ عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کے مطابق پاکستان کی ذمہ داری پوری ہو یاد رہے کہ حکومت نے حال ہی میں جاری کئے گئے صدارتی آرڈیننس کے تحت درخواست دائر کی تھی انڈین نیوی کے افسر کلبھوشن یادیو کو 3 مارچ 2016 کو جاسوسی کے الزام میں بلوچستان سے گرفتار کیا گیا تھاہندوستان نے کلبھوشن کی رہائی کے لیے عالمی عدالت سے رجوع کیا تھا عالمی عدالت نے اپنے فیصلے میں حکم دیا تھا کہ کلبھوشن اپنی رہائی اور فیر ٹرائل کے لیے پاکستانی عدالتوں سے رجوع کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں